Nanga Parbat Base Camp

Asif Sher Sial guide for raikot chilas to gilgit fairy meadows nanga parbat

Diamir (Nanga Parbat) is one of the Highest peeks in the world. The height of 8,126 metres (26,660 ft) above sea level make it ninth (9th) highest mountain in the world. Mountain falls in region Gilgit Baltistan. Nanga Parbat is the western anchor of the Himalaya. The name Nanga Parbat actual meaning is “Naked Mountain”. The mountain local name Diamer meaning is “huge mountain”. Following link of video contain few Trekking glimpses of Nanga Parbat from Fairy meadows.

To reach the deeply tempted Nanga Parbat you need to Reach Fairy meadows by a difficult jeep track from Raikot (Diamir District). As you reach Fairy meadows it take further few hours of Trekking to reach the Bayall camp, View point and base camps. The first hour trek will lead you to Bayaal village, and from there further few hours of fascinating walk will lead you to View Point and Base camp-1, further base camp-II can be reached in easy weather conditions only. The graves of foreigner climbers can be seen here, one of the reason Nanga Parbat is also called “Killer Mountain”.

ننگا پربت پہاڑ کا تعارف

چلاس جو کہ گلگت جاتے ہوئے انڈس دریا کے کنارے واقع ایک وادی ہے۔

رائے کوٹ پل چلاس سے گلگت جاتے ہوئے 58 کلومیٹر دور ہے ، ننگا پربت پہاڑ دیامر ضلع میں واقع ہے ۔ جبکہ موسم گرما میں زیادہ تر بابو سر ٹاپ سے رائے کوٹ بھی پہنچا جاتاہے ۔

رائے کوٹ پل سے تاتو گائوں تک بذریعہ خطرناک جیپ ٹریک تقریباً دو گھنٹے کا وقت لگتا ہے‘ ٹاٹو گائوں‘ یہ چھوٹا سا گائوں ہے جو سلفر کے گرم چشمے کی وجہ سے ٹاٹو یا تاتو (گرم) کہلاتا ہے‘ مقامی لوگوں کا دعویٰ ہے گائوں میں ایک ایسا گرم چشمہ ہے جس کے پانی میں شفا ہے۔ ‘ طوفانی نالہ تاتو پہنچ کر گائوں کے لیول پر آ جاتا ہے یا پھر گائوں چڑھائی چڑھ کر نالے کے لیول پر آباد ہے۔

تمام ننگا پربت یا فیری میڈو جانے والوں کو تین سے چار گھنٹے کافاصلہ پیدل طے کر کے فیری میڈوز پہنچنا ہوتا ہے ۔ جبکہ ننگا پربت بیس کیمپ تک پہنچنے کیلئے مزید کئی گھنٹے درکار ہوتے ہیں۔

Click to know: FAIRY MEADOWS ______ ” Breath taking ____ Paradise on Earth ____ “

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *